. حکومت حج کو مہنگا کرکے حاجیوں کی بددعائیں نہ لے،جماعت اسلامی - Today Pakistan
Home / پاکستان / حکومت حج کو مہنگا کرکے حاجیوں کی بددعائیں نہ لے،جماعت اسلامی

حکومت حج کو مہنگا کرکے حاجیوں کی بددعائیں نہ لے،جماعت اسلامی

مدینہ کی ریاست کے دعویدار لوگوں کو مکہ اور مدینہ جانے سے روک رہے ہیں، حج اخراجات پر سبسڈی دی جائے ، سینیٹر مشتاق احمد

اسلام آباد :سینٹ میں جماعت اسلامی نے حج اخراجات میں اضافے پر شدید احتجاج کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے حاجیوں پر ڈرون حملہ کر دیا، حج اخراجات میں اضافہ کا مقصد لوگوں کو حج سے روکنا ہے ،اب کوئی غریب آدمی حج پر نہیں جا سکتا، مدینہ کی ریاست کے دعویدار لوگوں کو مکہ اور مدینہ جانے سے روک رہے ہیں، حکومت حج کو مہنگا کرکے حاجیوں کی بددعائیں نہ لے، حج اخراجات پر سبسڈی دی جائے جبکہ وزیر مملکت علی محمد خان نے کہاہے کہ حج کے 70 فیصد اخراجات سعودیہ میں آتے ہیں جن پر ہمارا کنٹرول نہیں،حکومت کی کوشش ہے حج سے پہلے حاجیوں کو ریلیف فراہم کیا جائے، حج اخراجات میں اضافہ کو یہ رنگ دینا درست نہیں کہ حاجیوں کو حج سے روکا جارہا ہے، مدینہ کی ریاست میں لوگوں سے سچ بولا جاتا ہے ، ہم مدینہ کی ریاست قائم کرکے دکھائیں گے۔جمعہ کو اجلاس کے دوران سینیٹر مشتاق احمد نے حج اخراجات میں اضافے پر سنیٹر مشتاق احمد کا توجہ دلا ﺅنوٹس پر کہاکہ گزشتہ دن حکومت نے حج پالیسی کا اعلان کیا ۔ انہوںنے کہاکہ کابینہ کی جانب سے حج پالیسی پر سبسڈی نہیں دی گئی ۔ انہوںنے کہاکہ رواں برس حج اخراجات میں ایک لاکھ 76 ہزار اضافہ ہے۔ انہوںنے کہاکہ وزارت مذہبی امور نے 45 ہزار روپے کی سبسڈی کی درخواست کی ،حکومت نے اپنے وزیر کی بات نہیں مانی ۔ انہوںنے کہاکہ گزشتہ سال سرکاری حج 2لاکھ 80 ہزار تھے ۔ انہوںنے کہاکہ رواں برس قربانی کے اخراجات ملا کر 4 لاکھ 56 ہزار حج اخراجات آئیں گے ۔ سینیٹر مشتاق احمد نے کہاکہ عجیب حکومت ہے ،لوگوں کو مکہ مدینہ کی زیارت سے روک رہی ہے۔ انہوںنے کہاکہ حکومت نے حاجیوں پر ڈرون حملہ کر دیا۔انہوںنے کہاکہ مدینہ کی ریاست بنانے والوں سے مذہبی امور میں رعایت کی توقع تھی۔ سینیٹر مشتاق احمد نے کہاکہ تحریک انصاف کی پہلی حج پالیسی پریشان اور مایوس کن ہے ۔انہوںنے کہاکہ حج اخراجات میں اس قدر اضافہ کا مقصد لوگوں کو حج سے روکنا ہے ،اب کوئی غریب آدمی حج پر نہیں جا سکتا ۔ انہوںنے کہاکہ حکومت حج کو مہنگا کرکے حاجیوں کی بددعائیں نہ لے ۔ انہوںنے کہاکہ مدینہ کی ریاست کے دعویدار لوگوں کو مکہ اور مدینہ جانے سے روک رہے ہیں۔انہوںنے کہاکہ وزیر اطلاعات نے سینماو¿ں کی بحالی پر اربوں روپے خرچ کرنے کا کہا ،یہ کیسی ریاست مدینہ ہے؟۔ انہوںنے مطالبہ کیا کہ حج اخراجات پر سبسڈی دی جائے ۔ انہوںنے کہاکہ حج اخراجات کو دو لاکھ اسی ہزار روپے تک رکھا جائے۔ سینیٹر میاں رضا ربانی نے کہا کہ وزیر مذہبی امور ناراض تو نہیں،ایک روزقبل پریس کانفرنس بھی نہیں تھے اور اب ایوان میں بھی میں موجود نہیں۔توجہ دلاﺅ نوٹس کا جواب دیتے ہوئے وزیر مملکت پارلیمانی امور علی محمد خان نے کہاکہ حج کے 70 فیصد اخراجات سعودی عرب میں پہلے ادا کیے جاتے ہیں جن پر حکومت کا کوئی کنٹرول نہیں ۔ انہوںنے کہاکہ سعودی عرب جو اضافہ کرتا ہے ہے اس پر ہمارا اختیار نہیں۔ انہوںنے کہاکہ سعودی عرب نے سفر،رہائش اور کھانے پینے کے اخراجات میں اضافہ کیا ہے۔ علی محمد خان نے کہاکہ مسلم لیگ ن نے انتخابات کے سال میں 2017 کے حج اخراجات کو برقرار رکھا ۔ انہوںنے کہاکہ ستر فیصد حج اخراجات سعودی عرب میں آتے ہیں جن پر ہمارا کوئی کنٹرول نہیں ۔انہوں نے بتایا کہ سعودی عرب میں حج اخراجات میں 50 فیصد تک اضافہ ہوا ہے، حج پر عمارت کے اخراجات بڑھ کر 94 ہزار ہوگئے ہیں، ٹرانسپورٹ پر کرایہ بڑھ کر 13 ہزار، کھانے کے اخراجات بڑھ کر 38 ہزار، مدینہ میں رہائش کے اخراجات بڑھ کر 40 ہزار، لازمی حج چارجز 70 ہزار اور قربانی کے اخراجات بھی بڑھ کر 19 ہزار ہوگئے ہیں۔وزیر مملکت نے کہا کہ سال 18-2017 میں حج اخراجات میں کچھ نہ کچھ اضافہ کردینا چاہیے تھا لیکن الیکشن کے باعث گزشتہ حکومت نے حج اخراجات میں اضافہ نہیں کیا، ہم ابھی بھی کوشش کررہے ہیں کہ کچھ نا کچھ ریلیف مل جائے۔ انہوںنے کہاکہ حج اخراجات میں اضافہ کو یہ رنگ دینا درست نہیں کہ حاجیوں کو حج سے روکا جارہا ہے ۔ علی محمد خان نے کہا کہ مدینہ کی ریاست میں لوگوں سے سچ بولا جاتا ہے اور ہم مدینہ کی ریاست قائم کرکے دکھائیں گے اس دور ان چیئر مین سینٹ نے ہدایت کی کہ وزیر خزانہ حاجیوں کو سبسڈی دے دیں اچھی بات ہوگی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے