. پاکستان اور عمان کے درمیان مشترکہ وزارتی کمیشن کئے گئے مشترکہ فیصلوں کوعملی جامہ پہنانے کےلئے مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط - Today Pakistan
Home / پاکستان / پاکستان اور عمان کے درمیان مشترکہ وزارتی کمیشن کئے گئے مشترکہ فیصلوں کوعملی جامہ پہنانے کےلئے مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط

پاکستان اور عمان کے درمیان مشترکہ وزارتی کمیشن کئے گئے مشترکہ فیصلوں کوعملی جامہ پہنانے کےلئے مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط

پاک عمان دیرینہ تعلقات کو تجارتی اور اقتصادی تعاون کے فروغ کے ذریعے مزید آگے لے جانے کےلئے پر عزم ہیں،وزیر خارجہ

مسقط (ٹوڈے پاکستان نیوز) پاکستان اور عمان نے ساتویں مشترکہ وزارتی کمیشن کئے گئے مشترکہ فیصلوں کوعملی جامہ پہنانے کےلئے مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کردیئے ہیں جبکہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہاہے کہ پاک عمان تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کےلئے ہماری سوچ میں بہت یکسانیت پائی جاتی ہے، عرب ریاستوں میں عمان ہمارے سب سے قریب تر ہے،پاک عمان دیرینہ تعلقات کو تجارتی اور اقتصادی تعاون کے فروغ کے ذریعے مزید آگے لے جانے کےلئے پر عزم ہیں،عمان ہماری استعداد کار سے بھرپور فائدہ اٹھائے،اس وقت ہماری باہمی دو طرفہ تجارت کا حجم کافی کم ہے جسے بڑھانے کے لیئے ٹریڈ اور کامرس پر ایک مشترکہ ورکنگ گروپ بنانے کی تجویز دونگا،حکومت نجی شعبے کو پاکستان میں سرمایہ کاری کےلئے بہت سی سہولیات فراہم کر رہی ہے ،عمان کے نجی شعبے سے وابستہ کمپنیاں بھی سہولیات سے مستفید ہو کر پاکستان میں سرمایہ کاری کر سکتی ہیں،پاکستان جوائنٹ کمیشن کے اگلے اجلاس کےلئے آپ وفد کی میزبانی کےلئے انتہائی مسرت کے ساتھ، منتظر رہے گا۔ جمعرات کووزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور وزیر خارجہ عمان نے ساتویں مشترکہ وزارتی کمیشن اجلاس بعد جاری مشترکہ بیان جاری کیا ۔شاہ محمود قریشی نے کہاکہ مجھے اپنے عمانی ہم منصب یوسف بن علاوی بن عبداللہ کا شکریہ ادا کرنا ہے کہ انہوں نے 9 سال کے بعد پاک عمان وزارتی کمیشن کی نہ صرف میزبانی کی بلکہ مجھے اور میرے وفد کو بے پناہ محبتوں سے نوازا ۔مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہاکہ ہم نے اس جوائنٹ کمیشن کے اجلاس میں پاک عمان تعلقات کو فروغ دینے کے حوالے سے بہت سے پہلوو¿ں پر گفتگو کی اور کچھ اہم فیصلے لیے۔ انہوںنے کہاکہ کمیشن میں کیے گئے مشترکہ فیصلوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے ہم نے مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کئے تاکہ کمیشن کے اصول و ضوابط کی روشنی میں ان امور کو عملی شکل دی جا سکے۔ انہوںنے کہاکہ یہ بات انتہائی خوش آئند ہے کہ پاک عمان تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کےلئے ہماری سوچ میں بہت یکسانیت پائی جاتی ہے۔ انہوںنے کہاکہ عرب ریاستوں میں عمان ہمارے سب سے قریب تر ہے،ہماری سمندری حدود آپس میں ملتی ہیں، 30 فیصد عمانی، بنیادی طور پر پاکستان کے صوبہ بلوچستان سے ہیں جو ایک صدی پہلے عمان کی طرف ہجرت کر کے یہاں مقیم ہو گئے۔انہوںنے کہاکہ پاکستان اور عمان کے مابین قدیم مذہبی سیاسی اور ثقافتی تعلقات ہیں جو تاریخی نوعیت کے حامل ہیں۔ جاری بیان کے مطابق پاکستان اور عمان کے مابین بہت سے فورمز میں باہمی مشاورت جاری رہتی ہے جن میں، سیکرٹری خارجہ سطح پر دو طرفہ سیاسی مشاورت (جس کا آخری اجلاس اکتوبر 2017 مسقط میں ہوا)۔ بیان میں کہاگیاکہ پارلیمانی فرینڈ شپ گروپ اور جوائنٹ پروگرام ریویو گروپ شامل ہیں۔ بیان میں کہاگیاکہ اہم بین الاقوامی مسائل پر بھی ہماری سوچ میں خاصی مطابقت پائی جاتی ہے ہم پاک عمان دیرینہ تعلقات کو تجارتی اور اقتصادی تعاون کے فروغ کے ذریعے مزید آگے لے جانے کے لیے پر عزم ہیں۔ بیان کے مطابق مجھے خوشی ہے کہ ہمارے تین لاکھ کے قریب تارکین وطن، اپنی محنت سے عمان کی تعمیر و ترقی میں اپنا بھرپور کردار ادا کر رہے ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ صرف 2018 میں 25 ھزار پاکستانی عمان کی لیبر مارکیٹ کا حصہ بنے ہیں – ہم چاہتے ہیں کہ عمان ہماری استعداد کار سے بھرپور فائدہ اٹھائے۔ انہوںنے کہاکہ اسی لیے ہم نے لیبر اور ٹریننگ کے حوالے سے بھی مشترکہ طور پر ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط کئے ہیں۔ وزیر خارجہ کہا کہ اس وقت ہماری باہمی دو طرفہ تجارت کا حجم کافی کم ہے جسے بڑھانے کے لیئے ٹریڈ اور کامرس پر ایک مشترکہ ورکنگ گروپ بنانے کی تجویز دونگا انہوںنے کہاکہ پاکستان، گارمنٹس، ادویات سازی، آلات انجینئرنگ، زرعی مشینری اور دفاعی آلات میں بین الاقوامی سطح کی مصنوعات تیار کر رہا ہے ہم عمان کی مارکیٹ کی ضروریات کے مطابق ان کی ترسیل کرنے کی اہلیت رکھتے ہیں۔ وزیرخارجہ نے کہا کہ یہ بات ہمیں ذہن نشیں رکھنی چاہیئے کہ موجودہ عالمی اقتصادی تناظر میں نجی شعبے کا کردار انتہائی اہم ہے ہماری حکومت نجی شعبے کو بھی پاکستان میں سرمایہ کاری کے لئے بہت سی سہولیات فراہم کر رہی ہے عمان کے نجی شعبے سے وابستہ کمپنیاں بھی ان سہولیات سے مستفید ہو کر پاکستان میں سرمایہ کاری کر سکتی ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ہم رواں سال مارچ /اپریل میں جوائنٹ بزنس کونسل کا اجلاس بلائے جانے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ مجھے یقین ہے کہ اس اجلاس سے ہمارے دونوں ممالک کے کاروباری حضرات اور صنعتکاروں کو ایک دوسرے کے تجربات سے سیکھنے کا موقع ملے گا۔انہوںنے کہاکہ ہم آئل اور گیس کی دریافت کے لیے مشترکہ کاوشوں کے عزم کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ بیان میں کہاگیاکہ ہمیں امید واثق ہے کہ اب ان مشترکہ اجلاسوں کا سلسلہ تواتر سے جاری ریے گا پاکستان اس جوائنٹ کمیشن کے اگلے اجلاس کےلئے پاکستان میں آپ کے اور آپ کے وفد کی میزبانی کےلئے انتہائی مسرت کے ساتھ، منتظر رہے گا۔ انہوںنے کہاکہ میں ایک دفعہ پھر عمان کی قیادت کا تہہ دل سے ممنون ہوں کہ انہوں نے میری اور میرے وفد کی دل کھول کر میزبانی کی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے