سائفر غائب نہیں ہوا بلکہ چیف جسٹس کے پاس ریکارڈ میں موجود ہے، فواد چوہدری

تحریک انصاف کے نائب صدر فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ سائفر غائب نہیں ہوا بلکہ چیف جسٹس پاکستان کے پاس ریکارڈ میں موجود ہے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے غیر رسمی بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مریم نواز ہمیشہ احمقانہ باتیں کردیتی ہیں اور جب اس پر ردعمل آتا ہے تو وہ بھاگ جاتی ہیں۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مجھے امید ہے کہ آڈیو لیکس والے معاملے پر یہ لوگ نہیں بھاگیں گے، بلکہ اس کی مکمل تحقیقات ہوں گی، یہ لیکس سپریم کورٹ پہنچ گئی ہیں اب اس پر بھی عدالت کو میمو گیٹ کی طرح ایک کمیشن بنانا چاہئے۔

سابق وفاقی وزیر نے کہا کہ یہ ایک خوفناک بات ہے کہ پاکستان کے وزیراعظم کا دفتر محفوظ نہیں ہے، اس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان بھی محفوظ نہیں ہے، اور سپریم کورٹ اس معاملے کو ہلکا نہیں لے سکتی، ایسا نہیں ہوسکتا کہ معاملہ کسی جج کا ہو تو تحقیقات ہوں گی، بلکہ یہ ایک حساس معاملہ ہے جس پر سپریم کورٹ کو تحقیقات کرنی چاہئے۔

سائفر کے غائب ہونے کے حوالے سے بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ سائفر غائب نہیں ہوا، ہماری آخری کیبنٹ مینٹگ کے بعد وزیراعظم آفس والی سائفر کی کاپی اسپیکر کو بھجوائی گئی تھی اور اسپیکر نے وہ سائفر چیف جسٹس آف پاکستان کو بھیج دیا تھا۔

فواد چوہدری نے بتایا کہ ہماری کاپی چیف جسٹس پاکستان کے پاس ریکارڈ میں پڑی ہوئی ہے، ہمارا مطالبہ ہے کہ سائفر پرسپریم کورٹ کے زیر اہتمام کمیشن بنے اور عدالت عظمیٰ اس کی تحقیقات کرے، اس سے حکومت کیوں ڈر رہی ہے۔

رہنما پی ٹی آئی کا کہنا تھا کہ ہماری تمام میٹنگز اب لانگ مارچ کے لئے ہورہی ہیں، سائفر اور آڈیو لیکس کے معاملے شرلیاں اور پٹاخے ہیں جو چلتے رہیں گے۔

فواد چوہدری نے مزید کہا کہ قوم لانگ مارچ کے لئے تیار ہو، اسی میں پاکستان کی حقیقی آزادی ہے، اگر عوام غلام حکومت کی غلام بن کر رہنا چاہتی ہے تو الگ بات ہے، اور اگر ایک آذاد مملکت چاہئے جس میں عوام کی حکمرانی ہوتو لانگ مارچ کی تیاری کریں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں