نقد پیسوں کے ذریعے لوگوں کے ضمیروں کو خریدا جارہا ہے، ایاز جوگیزئی

کوئٹہ ( پ ر) پشتونخواملی عوامی پارٹی کے مرکزی سیکرٹری این اے 251اور NA-262کوئٹہ Iسے پارٹی کے نامزد امیدوار نواب ایاز خان جوگیزئی نے کہا ہے کہ پشتونخواوطن کے وسائل پر حق ملکیت ،حاکمیت اور خوداریت تسلیم کرانے تک جدوجہد جاری رکھی جائیگی ، روزگار تعلیم اور صحت کے شعبوں میں بہتری ترجیحات ہونی چاہیے ، گزشتہ منصوبے جو ادھورے رہ گئے ہیں اور ہمارے بعد والی حکومتوں نے ان کیلئے فنڈز نہیں رکھے پارٹی امیدوار کامیاب ہوئے تو وہ تمام ترقیاتی سکیمات ترجیحات میں ہونگی ، کوئٹہ کیلئے سب سے بڑا مسئلہ پانی کی عدم دستیابی کا ہے اور یہاں کے عوام ٹینکرز مافیا کے رحم وکرم پر ہیں، مانگی ڈیم اور دیگر فراہمی آب کے منصوبے ناگزیر ہوچکے ہیں ، عوام اپنے مسائل سے چھٹکارا پانے کیلئے اپنے حقیقی نمائندوں کا انتخاب کرےں، ووٹ کی پرچی قومی امانت ہے اور قومی امانت کا صحیح استعمال ہی مشکلات سے نجات کا راستہ ہے ، لوگ یہاں قومی امانت کو نقد پیسوں کے ذریعے خرید کر لوگوں کے ضمیروں کو خرید رہے ہیں یہ انسانیت کی توہین ہے ، ہم اپنے عوام کے سامنے بلند وبانگ دعوے نہیں کرتے لیکن خدا ہمیں اتنی توفیق نہ دے کہ ہم عوام کے ضمیر خریدنے کا سوچ بھی سکیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کلی نوحصار کوئٹہ میں شمولیت کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ جس سے پشتونخوامیپ کے مرکزی ڈپٹی چیئرمین عبدالرﺅف لالا ، ضلعی سینئر معاونین معلم سعید خان ، نصیر احمد کاکڑ، ضلع معاون و پی بی 38کوئٹہ Iکے نامزد امیدوار یاسین خان بازئی ، تحصیل سیکرٹری ملک نادر کاکڑ، ضلع کمیٹی کے رکن ارباب قادر کاسی ،ملک عبدالرحمن بازئی اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا ۔جبکہ سٹیج سیکرٹری کے فرائض علاقائی سینئر معاون سیکرٹری نوحصار اکبر زیارتوال نے سرانجام دیئے۔ اس موقع پر حبیب الرحمن بازئی ، حسن خان بازئی ، ابدال خان بازئی ، شیش خان بازئی ، خوشحال خان بازئی کی قیادت میں سینکڑوں افراد نے پارٹی میں شمولیت کا اعلان کیا ۔ مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پشتون افغان تاریخ میں ہر وقت اپنے قومی ہیروز اور وطن کے رکھوالوں کو دشمن سے کبھی شکست نصیب نہیں ہوئی لیکن انہیں اپنے قوم کے اندر ہی دشمن کی جانب سے پالے گئے کاسہ لیسوں کے ذریعے مات دی گئی ہے یہ میروائس نیکہ ، احمد شاہ بابا سے لیکر غازی امان اللہ خان اور آج تک پشتونوں کے قومی ہیروز اور ملی اتلان کےخلاف یہی طریقہ واردات استعمال کیا جارہا ہے ان کی اپنی صفوں میں دراڑیں ڈال کر انہیں نفاق اور نفرت کے ذریعے اپنے قومی تحریکوں اور قومی تحریکوں کے رہنماﺅں کے خلاف استعمال کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ لارنس آف عربیہ اور دیگر جاسوسوں نے ہمارے وطن کو ہمارے لوگوں کے ذریعے برباد کیا ۔ مقررین نے کہا کہ آج بھی پشتونوں کیلئے موقع پر کہ وہ اتحاد واتفاق کا دامن تھام کر اپنے قومی تحریک پشتونخوا ملی عوامی پارٹی کو مضبوط کریں اور اپنا و اپنے علاقے کا ووٹ قومی تحریک کے انتخابی نشان ”درخت “ کو ووٹ دیکر اپنا قومی فریضہ نبھائیں تاکہ پارٹی کے رہنماءعوام کے منتخب حقیقی نمائندے ملک کے ایوانوں ، قومی اسمبلی ، سینٹ اور صوبائی اسمبلیوں میں پہنچ کر وہاں پر تمام قوموں کے درمیاں پشتونوں کے بربادی کا کیس اور مقدمہ اچھے طریقے سے لڑ کر ان کے قومی حقوق کے تحفظ کے ضامن بنیں ۔ اس پشتون بلوچ مشترکہ صوبے میں بلوچ بھائی پشتونوں کے حقوق ماننے سے انکار ہیں اگرچہ وہ کروڑوں پنجابیوں سے برابری کی بات کرتے ہیں لیکن یہاں پر پشتونوں کے ساتھ تیسرے درجے کے شہری کا سلوک کیا جارہا ہے ۔ مقررین نے کہا کہ پشتونخوا وطن کو اللہ تعالیٰ نے بہترین قیمتی معدنیات سے نوازا ہے یہ وطن کوئلے ،کرومائیٹ، سنگ مرمر ،تیل ، گیس ، لکڑیوں ، زراعت اور جنگلات ، بجلی ، پانیوں کا وطن ہے لیکن اس کے باوجود پشتونخو ا وطن کے باسی محنت مزدوری اور دو وقت کی روٹی کیلئے واک اختیار حاصل کرنا پشتونخوا ملی عوامی پارٹی کے منشور کا حصہ ہے اور یہی ہمارے وطن کے عوام کے بھوک وافلاس ، غربت ، بیروزگاری اور پسماندگی کے خاتمے کا ذریعہ ہے، ماضی میں دھاندلی کے نتیجے میں میں جن لوگوں کو اسمبلیوں میں بھیجا گیا ان کے کارناموں کا نتیجہ یہ ہوا کہ آج ملک مسائل کے انبار اور دلدل میں پھنس چکا ہے اور اسے نکالنے کا آج بھی واحد علاج صاف شفاف آزادانہ منصفانہ اور غیر جانبدارانہ انتخابات ہیں ۔ دھاندلی کی گئی تو یہ دلدل ہم سب کو لے ڈوبے گا۔ سیاستدانوں کو سیاست ، صحافیوں کو صحافت ، عدلیہ کو عدل وانصاف کرنے کیلئے آزاد چھوڑا جائے اور تمام ادارے اپنے اختیارات کے دائرے میں رہتے ہوئے آئین کے تحت اس ملک کیلئے کام کریں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں